جرمنی میں جسم فروشی کا بڑھتا منافع بخش کاروبار

جرمنی میں جسم فروشی کے کاروبار کو قانونی حیثیت حاصل ہے۔ دیگر دفتروں کی طرح جسم فروشی کے اڈوں پر بھی کام کیا جا سکتا ہے اور

خواتین اسے پیسے کمانے کا تیز ترین طریقہ خیال کرتی ہیں ۔ 

سن دو ہزار دو میں جرمن حکومت نے جسم فروشی سے متعلق ایک نیا ایکٹ نافذ کیا تھا اور اسے قانونی حیثیت حاصل ہو گئی۔ تب تک جسم فروشی کرنے والی خاتون اور کسی سیکس سینٹر کے مالک کے درمیان ہونے والے معاہدے کو غیر اخلاقی تصور کیا جاتا تھا۔ یہاں تک کہ قحبہ خانہ چلانے والے کے خلاف جسم فروشی کو فروغ دینے کے الزام کے تحت اُس پر مقدمہ بھی چلایا جا سکتا تھا۔ اب قحبہ خانہ چلانے والوں کو قانونی تحفظ حاصل ہے۔

جسم فروش خواتین کو ٹیکس پہلے بھی ادا کرنا پڑتا تھا لیکن اب ایسی خواتین ہیلتھ اور سماجی انشورنس بھی کروا سکتی ہیں۔ جسم فروش خواتین مستقل بنیادوں پر بھی کام کر سکتی ہیں جبکہ جسم فروش خواتین کا استحصال اب بھی جرم ہے۔

عصمت فروشی اور انسانی اسمگلنگ

جرمنی میں جسم فروشی کا قانون دنیا بھر کے لبرل قوانین میں سے ایک ہے۔ مثال کے طور پر امریکا میں جسم فروشی غیرقانونی کام ہے۔ اسی طرح سویڈن اور فرانس میں بھی پیسے لے کر جنسی تعلق قائم کرنا ممنوع ہے۔ لیکن ان ملکوں میں بھی جسم فروشی کا کاروبار ہوتا ہے اور پولیس اسے مکمل طور پر کنٹرول کرنے میں ناکام ہے۔ اگر کسی ایسے جوڑے کو پکڑ بھی لیا جائے تو وہ خود کو ایک دوسرے کے دوست قرار دے دیتے ہیں۔

اب جرمنی میں بھی انسداد عصمت فروشی کی ایک تحریک جسم فروشی کو غیرقانونی قرار دینے کے مطالبہ کر رہی ہے۔ اس تحریک میں شامل افراد کا کہنا ہے کہ جسم فروشی کو قانونی تحفظ دینے سے نہ صرف انسانی اسمگلنگ میں اضافہ ہوا ہے بلکہ بہت سی لڑکیوں کو دباؤ کے تحت یہ کام کرنا پڑ رہا ہے۔ دوسری جانب ماہر سماجیات باربرا کیومان کا کہنا ہے کہ انسانی اسمگلنگ کا جسم فروشی کے قانون سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ بڑھتی ہوئی انسانی اسمگلنگ کی بنیادی وجہ یورپی یونین کی پھیلتی ہوئی سرحدیں ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ دو ہزار چار کے بعد مشرقی یورپ کے تیرہ ملکوں کو یورپی یونین میں شامل کیا گیا ہے۔ ان نسبتاﹰ غریب ممالک کی خواتین قانونی طور پر جرمنی میں آ سکتی ہیں اور قیام بھی کر سکتی ہیں۔

کم سن جسم فروش لڑکیاں

برلن کی ایک تنظیم ’ہائیڈرا‘ کے مطابق جرمنی میں جسم فروش خواتین کی تعداد تقریباً چار لاکھ ہے۔ تاہم اس حوالے سے بھی معلومات بہت محدود ہیں۔ کام ڈھونڈنے کی نیت سے آنے والی ہر گیارہویں لڑکی نابالغ ہوتی ہے۔

دوسری جانب جرمنی میں بچوں سے بھی جسم فروشی کروانے کے واقعات بڑھتے جا رہے ہیں۔ قانونی طور پر بچوں سے جسم فروشی کرانا ایک جرم ہے جو اب ایک منافع بخش کاروبار بھی بن چکا ہے۔ بچوں سے جسم فروشی کا کام انتہائی خفیہ طریقے سے لیا جاتا ہے۔ نائٹ کلبوں، بازار حُسن اور اسی طرح کے دیگر اڈوں پر کم سن بچے دکھائی نہیں دیتے۔ جرمنی میں بچوں کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے ایک ادارے سے منسلک میشتِھلڈ ماؤرر کہتی ہیں کہ اس حوالے سے باقاعدہ اعداد و شمار موجود نہیں ہیں۔

تجزیہ کاروں کے مطابق اس کاروبار سے بہت سے ایسے نوجوان لڑکے لڑکیاں بھی منسلک ہیں، جو اسکول بھی جاتے ہیں اور بعد دوپہر جسم فروشی کرتے ہیں۔ ایک جائزے کے مطابق ایسا کم ہی ہوتا ہے کہ کوئی لڑکا یا لڑکی کسی اجنبی کے کہنے پر جسم فروشی پر رضامند ہو جائے۔ اس جانب دلچسپی پیدا کرنے میں دوستوں، جاننے والوں اور رشتہ داروں کا کردار اہم ہوتا ہے۔ اس کی سب سے بڑی وجہ بھروسہ ہے۔ جسم فروشی کے کاروبار سے متاثر ہونے والوں سے رابطہ کرنا انتہائی مشکل ہوتا ہے۔ متاثرہ افراد میں سے شاذ و نادر ہی کوئی کسی امدادی تنظیم کے پاس مدد کے لیے جاتا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ایسی متعدد وجوہات ہیں، جن کے باعث جسم فروشی کے جال سے رہائی ایک بہت ہی مشکل اور طویلمرحلہ ہے۔

اس میں کوئی عجب بات اور عیب نہیں کیونکہ منڈی کے نظام میں صرف اور صرف منافع اور شرح منافے کماجاتے ہیں وہ کہاں سے اور کیسے حاصل ہوتے ہیں اس پر بات نہیں کی جاتی یہ سرمایہ چاہیے مقدس رشتوں  معصوم اور پاکیزہ احساس اور جذبات کچل کر اور انسانی تعلق سے ہی کیوں نہ حاصل ہوں جائز ہیں۔ 

Comments   

0 #8 IsrafaceKigAT 2018-06-06 02:29
Израиль знакомства

еврейки подробнее по ссылке
Quote
0 #7 PierrenugDY 2018-05-31 10:05
ктп 25,ктп 25 ква,ктп 25 10
Quote
0 #6 AKUdrainnyMY 2018-04-02 15:50
Компания «Акен» – высокопрофессио нальная сервисная служба, с которой ремонт окон больше не проблема. Мы предоставляем широкий спектр услуг быстро и с предоставлением гарантии. Это и ремонт окон Киев, и регулировка окон в Киеве, и ремонт стеклопакетов, и замена стеклопакетов.
Довольно часто случается так, что ищущих ремонт пластиковых окон, могут огорчить результаты запроса ремонт окон киев цена. Но это не относится к клиентам компании «Акен», поскольку мы имеем свое производство, а это дает возможность значитльно сэкономить. Чего также никогда не знают наши клиенты - это дополнительные платежи и непредвиденные обстоятельства.
Стоит заметить, что мы используем исключительно наиулучшие материалы: стеклопакеты в Киеве, уплотнительная резинка, аксессуры для окон, фурнитура для окон, гаджеты для окон. В частности, у нас можно купить подоконники Данке Киев, а также и других производителей.
Акен Киев севис ремнта окон - ремонт окон
Quote
0 #5 KristinkaTugPE 2018-03-25 20:05
Смотреть всем: как приготовить здоровое питание рецепты
Quote
0 #4 RandallTagueFI 2018-01-30 17:31
ПОСТИНГ В СОЦИАЛЬНЫЕ ЗАКЛАДКИ
С некоторых пор специалистами занимающимися продвижением сайтов в Интернете задаётся один и тот же вопрос: что такое рИЦ
Quote
0 #3 DadgilCoestYH 2018-01-29 11:07
Сайты с "резиновым" дизайном
ПРОДВИЖЕНИЕ САЙТА : стоит ли раскручивать самостоятельно? Зарабатывать при помощи собственного электронного ресурса стало очень популярно.
Quote
0 #2 JeffreycrypeDN 2018-01-29 10:09
Авторитетные каталоги Рунета
Виджет,отсчет времени,seo,Кей коллектор,key collektor,алгор итм google pagerank,google pagerank,Прогон по закладкам. Бесплатные сервисы,Зарубеж ные хостинги,Индекс яндекса
Quote
+1 #1 shah 2015-02-08 18:59
i personally visit here, women form all europe are coming here to earn money, and its a legal business here . but now as i seen alot of locals residents saying that government have to move this business from here, because its effecting our way of life.
Quote

Add comment


Security code
Refresh